صحت

عام طور پر باتھ روم میں سٹروک زیادہ کیوں ہوتے ہیں؟

باتھ روم میں عام طور پر سٹروک زیادہ کیوں ہوتے ہیں؟ غسل خانوں میں عموماً فالج زیادہ ہوتے ہیں کیونکہ جب ہم باتھ روم میں داخل ہوتے ہیں تو سب سے پہلے اپنے سر اور بالوں کو بھگو دیتے ہیں جو کہ نہیں ہونا چاہیے۔

یہ ایک غلط طریقہ ہے

یہ ایک غلط طریقہ ہے۔ اس طرح اگر آپ پہلے سر میں پانی پلائیں تو خون سر کی طرف تیزی سے اٹھتا ہے اور شریانیں ایک ساتھ پھٹ سکتی ہیں۔ نتیجے کے طور پر، فالج ہوتا ہے اور پھر زمین پر گر جاتا ہے. جرنل آف کینیڈا کی میڈیکل ایسوسی ایشن میں شائع ہونے والی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ فالج یا منی اسٹروک کی وجہ سے جن خطرات کی پہلے پیش گوئی کی گئی تھی، درحقیقت یہ خطرہ زیادہ دیرپا اور اس سے بھی زیادہ خطرناک ہوتا ہے۔ دنیا بھر میں متعدد مطالعات کے مطابق نہانے کے دوران فالج کے باعث موت یا فالج کے کیسز میں روز بروز اضافہ ہو رہا ہے۔ ڈاکٹروں کے مطابق غسل کرتے وقت کچھ اصولوں پر عمل کرتے ہوئے نہانا چاہیے۔

اگر آپ صحیح اصولوں کے مطابق غسل نہیں کرتے ہیں تو آپ کی موت بھی ہوسکتی ہے۔ نہاتے وقت سر اور بالوں کو پہلے نہ بھگویں۔ کیونکہ انسانی جسم میں خون کی گردش ایک خاص درجہ حرارت پر ہوتی ہے۔ جسم کا درجہ حرارت باہر کے درجہ حرارت کے مطابق ہونے میں کچھ وقت لگتا ہے۔ ڈاکٹروں کے مطابق سر پر پانی سب سے پہلے خون کی گردش کی رفتار بڑھاتا ہے۔ اس وقت فالج کا خطرہ بھی بڑھ سکتا ہے۔ ضرورت سے زیادہ بلڈ پریشر دماغ کی شریانوں کو پھاڑ سکتا ہے۔

غسل کا صحیح طریقہ

:- پہلے پاؤں بھگونے ہیں۔ پھر آہستہ آہستہ کندھے کو اوپر کی طرف بھگو دیں۔ تو منہ میں پانی آجائے گا۔ سب کے آخر میں اپنے سر پر پانی ڈالنا چاہیے۔ یہ طریقہ ہائی بلڈ پریشر، ہائی کولیسٹرول اور درد شقیقہ کے شکار افراد کو ضرور اپنانا چاہیے۔ یہ معلومات بزرگ والدین اور رشتہ داروں کو ضرور بتائیں۔

 

Disclaimer: This is for information purpose only and should not be considered as a substitute for medical expertise. These are opinions from an external panel of individual doctors or nutritionists and not to be considered as opinion of urdughar. Please seek professional help regarding any health conditions or concerns. Medical advice varies across region. Advice from professionals outside your region should be used at your own discretion. Or you should contact a local health professional.

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button