Monday, February 26, 2024
HomeشاعریGhar Poetry in Urdu (گھر اردو شاعری) - Ghar Urdu Shayari

Ghar Poetry in Urdu (گھر اردو شاعری) – Ghar Urdu Shayari

Ghar poetry in Urdu (گھر اردو شاعری) holds a special place in the hearts of poetry enthusiasts. Ghar, meaning home in English, is a theme that resonates deeply with many individuals. Urdu, known for its rich and expressive language, beautifully captures the essence of ghar through poetry.

Ghar poetry often revolves around themes such as nostalgia, longing, belonging, and the various emotions attached to the concept of home. It explores the intimate and intricate relationship between individuals and their physical or emotional dwelling spaces.

اردو شاعری میں گھر کو ایک مقدس جگہ کے طور پر پیش کیا گیا ہے۔ یہ وہ جگہ ہے جہاں ہمیں محبت، سکون اور حفاظت ملتی ہے۔ یہ ہماری پہچان اور ہماری خوشیوں کا گھر ہے۔

Table of Contents

Collection Of Ghar Poetry in Urdu

The word “Ghar” in Urdu translates to “home,” which evokes a sense of belonging, comfort, and security. Ghar poetry in urdu, therefore, is a genre of Urdu poetry that explores the themes of home, family, and the emotions associated with them.

Ghar Ke Bahar Dhoondhtaa Rahta Huun Duniya
Ghar Ke Andar Duniya-Daari Rahti Hai

گھر کے باہر ڈھونڈھتا رہتا ہوں دنیا

گھر کے اندر دنیا داری رہتی ہے

Chut ke ghar aa gae asiir tera

Lekin ab in ko kaun pehchane

چھٹ کے گھر آ گئے اسیر ترے

لیکن اب ان کو کون پہچانے

Aaj tak subah-e-azal se vahi sannata hai

Ishq ka ghar kabhi sharminda-e-mehman na hua

آج تک صبح ازل سے وہی سناٹا ہے

عشق کا گھر کبھی شرمندۂ‌ مہماں نہ ہوا

Pata ab tak nahi badla hamara

Wahi ghar hai wahi qisa hamara

پتا اب تک نہیں بدلا ہمارا

وہی گھر ہے وہی قصہ ہمارا

Esy dary hwy hai zamany ki chal se

Ghar mein bhi paon rakhty hai hum tu sambhal kar

ایسے ڈرے ہوئے ہیں زمانے کی چال سے

گھر میں بھی پاؤں رکھتے ہیں ہم تو سنبھال کر

Kyun  chalte chalte ruk gaye veeran raston

Tanha hoon aaj mein zara ghar tak tu sath do

کیوں چلتے چلتے رک گئے ویران راستو

تنہا ہوں آج میں ذرا گھر تک تو ساتھ دو

 

Tauba kitni simat gai duniya

Ek ghar ke nahi makeen milty

توبہ کتنی سمٹ گئی دنیا
ایک گھر کے نہیں مکیں ملتے

Nahi hai ghar koi esa jahan is ko na dekha ho

Kehna se nahi kuch kam sanam mera wo har jai

نہیں ہے گھر کوئی ایسا جہاں اس کو نہ دیکھا ہو

کنھیا سے نہیں کچھ کم صنم میرا وہ ہرجائی

Arsy baad sapahi ki ghar wapsi par

Maa  ne jesy jhoom ke eid mnai

عرصے بعد سپاہی کی گھر واپسی پر
ماں نے جیسے جھوم کہ عید منائی

So tarhan le veham aur anginat shar aayen gy

Aaj wo keh kar gaye hai deir se ghar aayen gy

سو طرح کے واہمے اور انگنت شر آئینگے

آج وہ کہہ کر گئے ہیں دیر سے گھر آئینگے

Par sakoon ujhal wo manzar kar lia

Jab se tune ghairon mein ghar karlia

پر سکوں اوجھل وہ منظر کر لیا
جب سے تو نے غیروں میں گھر کر لیا

Us ne dushmano ko bakhabar rakha hua hai

Yeh tu ne jis ko apna keh ke ghar rakha hua hai

اُسی نے دشمنوں کو با خبر رکھا ہوا ہے
‏یہ تونےجس کواپناکہہ کہ گھررکھاہواہے

Khak hi khak thi aur khak bhi kia kuch nahi tha

Mein jab aaya tu mery ghar ki jagha kuch nahi tha

خاک ہی خاک تھی اور خاک بھی کیا کچھ نہیں تھا
میں جب آیا تو میرے گھر کی جگہ کچھ نہیں تھا

jane waly se raabta reh jaye

Ghar ki deewar par diya reh jaye

جانے والے سے رابطہ رہ جائے
گھر کی دیوار پر دیا رہ جائے

main jangalon ki taraf chal paḌa hun chhoḌ ke ghar

ye kya ki ghar ki udasi bhi saath ho gai hai

میں جنگلوں کی طرف چل پڑا ہوں چھوڑ کے گھر

یہ کیا کہ گھر کی اداسی بھی ساتھ ہو گئی ہے

Kya maloom ke ab wo khusbhu kis Ghar ko mehkaye Gi

Khawab shuroo kidhar hota hoi aur kidhar mil jata hai

کیا معلوم اب وہ خوشبو کس گھر کو مہکاۂے گی
خواب شروع کدھر ہوتا ہے اور کددھر مل جاتا ہے

Tu jis ko keh raha purana laga mujhe

Yeh Ghar khareedne main zamana laga mujhe

تو جس کو کہۂ رہا ہے پرانا لگا مجھے

یہ گھر خریدنے میں زمانہ لگا مجھے

Basti men hai vo sannaTa jangal maat lage
Shaam Dhale bhi ghar pahunchun to aadhi raat lage

بستی میں ہے وہ سناٹا جنگل مات لگے

شام ڈھلے بھی گھر پہنچوں تو آدھی رات لگے

Previous article
متعلقہ مضامین

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

متعلقہ