small business ideas in pakistan 582

پچاس ہزارسے کم رقم سے کاروبار شروع کریں

اردوگھر کی سائیٹ دیکھتے ہوئے کئی سال ہو گئے ہیں ، ایک پوسٹ بڑے تواتر کے ساتھ دیکھ رہا ہوں کے بھائی پچاس ہزار ہیں ، کوئی کاروبار بتاؤ۔ ان تمام بھایئوں سے گزارش ہے کے فیس بک کو دفع کرو اپنے قریبی بازار چلے جاؤ ، ایک چھوڑ دس کاروبار ملے گے جو کے پچاس ہزار میں شروع کئے جا سکتے ہیں۔ پرسوں میں جہلم بازار گیا تھا اور آج گجرات بازار ، ان دونوں شہروں میں مجھے موزے بچتے بچے ملے اور یقیناً انہوں نے پچاس ہزار نہیں خرچ رکھے تھے ، مکئی کے دانے اور مونگ پھلی بیچتے کچھ افراد دکھائی دئے ، میری ناقص عقل کے مطابق ان کے کاروبار کی مالیت کسی طور پچاس ہزار سے زیادہ نہیں تھی۔ کچھ افراد نے فروٹ چاٹ کی ریڑھی لگا رکھی تھی ، کچھ نے چنا چاٹ کی اور کچھ بریانی بیچ رہے تھے ، ان کے کاروبار کی مالیت ہر گز پچاس ہزار سے زیادہ نہیں تھی ۔ایک دو بھائی کشمیری چاے بیچتے نظر اے ، ایک دو بھائی پکوڑے سموسے ، اپنی تمام تر جہالت کے باوجود مجھے نہیں لگتا کے ان کے سامان کی مالیت پچاس ہزار سے زیادہ تھی ، دو تین پھلوں اور سبزیوں کی ریڑھیاں دیکھی مجھے یقین ہے کے ریڑھی پر موجود سامان کی مالیت پچاس ہزار سے کم تھی۔ سردیوں کا سیزن ہے سائکل پر آپ نے بھی کچھ لوگوں کو مرغیاں بیچتے دیکھا ہو گا ، یہ کاروبار بھی پچاس ہزار کی “قلیل ” رقم سے شروع کیا جا سکتا ہے۔ چلیں یہ ٹھہرے شہر کے کاروبار ، گاؤں والے کیا کریں ؟؟ بھایئوں آدھ پر آپ کو گاے ، بھینس اور بکری مل جاتی ہے ، جس میں دوسرا شخص آپ کو گاے ، بھینس یا بکری خرید کر دیتا ہے ، آپ اس کی پرورش کرتے ہیں اور منافع آدھا آدھا ۔یہ نہیں ہو سکتا ! کوئی بات نہیں دس مرغیاں رکھ لیں ، انھیں باہر کھیتوں کھلیانوں میں دانا چگنے دیں ، اللہ‎
اللہ‎
خیر صلا ۔ یہ نہیں کر سکتے کوئی بات نہیں ، گندم کا سیزن پانچ چھے ماہ میں شروع ہو جائے گا ، اپنا گروپ بناہے اور حصے پر گندم کی کتای کریں ۔ یہ بھی نہیں کر سکتے کیوں کے آپ شہر جاتے ہیں تو گاؤں سے دودھ لے کر اپنا منافع رکھ کر شہر فروخت کریں، پچھلے ہفتے ایک بندے کو ہم دس کلو دودھ پچاسی روپے فی کلو کے حساب سے فروخت کرتے ہیں وہ ہمیں 120 روپے فی کلو دے رہا تھا اگر ہم دودھ اس کی دکان تک پہنچا سکیں۔ زمین نہیں ہے ، کیا کیا جائے ، میرے دو کزنز نے اپنی سترہ سترہ بگے زمین چالیس ہزار سالانہ کے عیوض ٹھیکے پر دے رکھی ہے ، آپ بھی آگے پیچھے نظر پھیریں یقیناً ایسے افراد نظر اے گے جن کی نازک طبیعتیں زمینداری کا بو جھ نہیں اٹھا سکتی۔ اتنی لمبی پوسٹ کرنے کا مقصد یہ ہے کے کچھ تو کریں !!!۔

تحریر  علی رضا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں